تلہ گنگ کے حلقہ این اے 61چکوال 2آمدہ الیکشن سیٹ خطرے میں اونٹ کس کروٹ بیٹھتا ہے یہ آنے والا ٹائم بتائے گا

0
692

Pakistan Muslim League Nawazتلہ گنگ(تحصیل رپورٹر) ایک ماہ سے زائد عرصہ ہو گیا تلہ گنگ شہر میں کاروبار زندگی بحال نہ ہو سکا ،بے روز گاری میں اضافہ، ن لیگ حکومت کی تلہ گنگ شہر سے ہمیشہ کیلئے چھٹی یقینی ہو گئی ۔تفصیلات کے مطابق اکیس جنوری کو اسسٹنٹ کمشنر تلہ گنگ وسیم خان نے بغیر کسی پیشگی اطلاع اور تحریری نوٹس کے ہیوی مشینری کے ذریعے تلہ گنگ شہر کے مین روڈ پر واقع پانچ سو کے لگ بھگ دکانیں مارکیٹیں اور کئی متعدد پلازے گرا دیئے ۔اس موقع پر امن و امان کی صورتحال سنگین ہونے کا خطرہ پیدا ہو گیا تھا تاہم متاثرین کی جانب سے صبر و تحمل کا مظاہرہ کیا گیا ۔ اے سی تلہ گنگ کا موقف تھا کہ مذکورہ تعمیرات تجاوز تھیں جبکہ دوسری جانب متاثرین کا کہنا تھا کہ مذکورہ روڈ ہائی وے کا ملکیتی ہے جس پر صرف محکمہ ہائی وے کو کارروائی کا حق تھا ۔لیکن مقامی انتظامیہ نے محکمہ مال کو استعمال کر کے لوگوں کو اُن کی کروڑوں روپے مالیت کی قیمتی املاک سے محروم کر دیا ۔شہر میں اس ٖغیر قانونی اقدام پر ق لیگ کے مرکزی رہنماء اور اس حلقہ سے دوبار الیکشن لڑنے والے سابق وزیر اعلیٰ پنجاب چودھری پرویز الہٰی،سابق ضلع ناظم چکوال سردار غلام عباس ،رہنماء ق لیگ حافظ عمار یاسر ،سابق ایم این اے سردار منصورر حیات ٹمن ،سابق صوبائی وزیر فوزیہ بہرام سمیت سیاسی قائدین نے شدید مذمت کی ۔اور متاثرین کے ساتھ اظہار یکجہتی کیا ۔جبکہ گرائے جانے والی دکانیں اور مارکیٹیوں کی مرمت کا کام تا حال جاری ہے ۔جس کی وجہ سے کاروبار ٹھپ پڑے ہیں ۔ایک اندازے کے مطابق پندرہ سے بیس ہزار کے قریب لوگ اس وقت ہاتھ پہ ہاتھ دھرے بیٹھے ہیں ۔علاقہ میں ن لیگ کے طرز حکمرانی کیخلاف آوازیں اُٹھ رہی ہیں ۔اور دیکھائی دے رہا ہے کہ تلہ گنگ شہر میں ن لیگ کا بوریا بستر ہمیشہ کیلئے گول ہو جائیگا ۔

تبصرے

شیئر کریں

کوئی تبصرہ نہیں

جواب چھوڑ دیں