چکوال غفلت ،لاپروائی اور نا اہلی چودہ سالہ شرجیل اعجازعمر بھر کیلئے دونوں بازؤں سے معذور

0
180
4تلہ گنگ(تحصیل رپورٹر) واپڈا (آئیسکو) چکوال کے ذمہ داران کی غفلت ، لاپرواہی اور نااہلی سے چودہ سالہ ساتویں کلاس کا طالب علم شرجیل اعجاز گیارہ ہزار کے وی کی تاروں سے بجلی کرنٹ لگنے کے باعث ساری عمر کیلئے دونوں بازوؤں سے معذور ہوگیا ، مقامی صحافی و ’’پریس فورم‘‘ میڈیا گروپ کے چیف ایڈیٹر محمدریاض انجم کے بھتیجے شرجیل اعجاز کا روشن مستقبل تاریکیوں کی بھینٹ چڑھ گیا ، بیٹے کی معذوری دیکھ کر اس کے والدین کی امیدیں بھی دم توڑ گئیں یہ اندوہناک سانحہ اس وقت پیش آیا جب شرجیل اعجاز ودیگر بچے ایک فیملی فنگشن کے دوران پڑوسی کی چھت پر کھیل رہے تھے کہ چھت کے انتہائی قریب سے گزرتی ہوئی واپڈا کی ہائی وولٹیج سپلائی تاریں تباہی کا سبب بن گئیں اور شرجیل اعجاز تاروں کی لپیٹ میں آکر کرنٹ لگنے کے باعث شدید زخمی ہوگیا جسے فوری طور پر ڈی ایچ کیو ہسپتال بعدازاں تشویشناک حالت میں ہولی فیملی ہسپتال راولپنڈی ریفر کردیا گیا جہاں دو ہفتوں کی سرتوڑ کوششوں کے باوجود سرجن ڈاکٹروں کو کندھوں کے نیچے سے اس کے دونوں بازوکاٹ دینے پڑے ، دوران حادثہ شرجیل اعجاز کی بڑی آنت میں بھی دو جگہ سے سوراخ ہوگئے تھے جس کے اب تک دو آپریشن کئے جاچکے ہیں اور بچہ اب بھی موت و حیات کی کشمکش میں مبتلا زیر علاج ہے جس کی جان بچانے کی کوششیں جاری ہیں ،چھ سال قبل حافظ شاہد اقبال ولد محمد اقبال نامی چھبیس سالہ نوجوان بھی انہی تاروں سے ٹکرا کر ہلاک ہوچکا ہے لیکن اس وقت واپڈا (آئیسکو ) حکام نے کوئی حفاظتی اقدامات نہ اُٹھائے تھے جس کی بناء پر چودہ سالہ شرجیل اعجاز بھی زندگی بھر کیلئے معذور ہوچکا ہے اور اس کی جان بھی تاحال خطرہ سے باہر نہیں ہے ،متاثرہ فریق نے واپڈا کے متعلقہ حکام کے خلاف قانونی کارروائی کا عندیہ دیتے ہوئے کہا ہے کہ آئے روز پیش آنے والے ایسے حادثات کی روک تھام کیلئے بھرپور احتجاجی اقدامات اُٹھائے جائیں گے ۔

تبصرے

شیئر کریں

کوئی تبصرہ نہیں

جواب چھوڑ دیں