وزیر اعلیٰ بلوچستان ڈاکٹر عبدالمالک بلوچ کی تلہ گنگ آمدکارکنوں سے گفتگو اور میڈیا سے سوالات۔۔

0
120
02تلہ گنگ (تحصیل رپورٹر ) نیشنل پارٹی تلہ گنگ کی دعوت پر سابق وزیر اعلیٰ بلوچستان ڈاکٹر عبدالمالک بلوچ کی تلہ گنگ آمد ،کارکنوں سے گفتگو اور میڈیا کے سوالات کے جوابات دئیے ،اس موقع پر نیشنل پارٹی پنجاب کے صدر کمانڈر (ر) ایوب ملک اور نیشنل پارٹی بلوچستان کے صدر کہرام اکرم دشتی بھی ان کے ہمراہ تھے ۔نیشنل پارٹی تلہ گنگ کے آرگنائزر حسنین ملک نے علاقہ کی سیاسی صورتحال اور پارٹی امور پر سینئر قائدین کو بریفننگ دی، ایوب ملک صدر نیشنل پارٹی پنجاب نے پارٹی کارکنان سے گفتگو کرتے ہوئے پارٹی آرگنائزیشن کو مضبوط بنانے کی ہدایت کی ۔ اکرم دشتی نے نیشنل پارٹی تلہ گنگ کے کارکنان کے والہانہ استقبال پر ان کا شکریہ ادا کیا اور ان کے جذبہ اور لگن کی تعریف کی ،سابق وزیر اعلیٰ بلوچستان ڈاکٹر عبدالمالک نے پارٹی کارکنان کی حوصلہ افزائی کرتے ہوئے کہا کہ ہم نے تربت میں 1962 سے جاگیردارانہ کلچر کو شکست دے دی تھی اور آج تک وہاں سے کوئی نواب ذادہ یاسردار MPA منتخب نہیں ہو سکا یہ اکیسویں صدی ہے۔ اس میں جاگیرداری کلچر کی کوئی گنجائش نہیں ہے اس کو ختم ہونا ہے ۔چاہے ہماری زندگی میں ختم ہو چاہیے یا ہمارے چلے جانے کے بعد ہو۔ ڈاکٹر مالک بلوچ نے کہا تلہ گنگ کے حقوق کیلئے میاں نواز شریف صاحب کو ان کا وعدہ یاد دلاؤں گا، انہوں نے کہا کہ تلہ گنگ کو ضلع ضرور بننا چاہیے اور تلہ گنگ سٹی ہسپتال سے اٹھائی جانے والی مشینری کو واپس آنا چاہیے ،پانامہ لیکس کے حوالہ سے کیے جانے والے سوالات کے جواب دیتے ہوئے انہوں نے کہا کہ سرمایادارانہ نظام کی بنیادی کرپشن پر ہے کسی کی کرپشن سامنے آجاتی ہے کوئی اس کو چھپا لیتا ہے ہم کرپشن کرنے والوں کے کڑے احتساب کا مطالبہ کرتے ہیں لیکن اس سلسلہ میں جمہوریت کو ڈی ریل کرنے کی سازش کی بھرپور مخالفت کرتے ہیں ۔کرپشن کرنے والوں کو قرار واقعی سزا ملنی چاہیے خواہ وہ جس نے بھی کی ہو، پاک چائنہ اکنامک کوریڈو ر کے حوالہ سے بات کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ اس کے فوائد گواردر اور بلوچ عوام کو ملنے چاہیں ہم کسی صورت گوادر اور بلوچ عوام کے حقوق عقب نہیں ہونے دیں گے اپنے دور حکومت کے حوالہ سے کئے جانے والے سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ ہم نے مشکل دور میں بہترکارکردگی دیکھائی لااینڈ آرڈر کی سچوئیشن کو بہت حد تک بہتر کیا بہت سے ناراض بلوچوں کو قومی دھارے میں لے کر آئے اور ایک نان فنگشنل گورنمنٹ کو فنگشنل کیا۔ تعلیم اور صحت کی سہولیات کی بہتری کیلئے انتہائی موثر اقدامات اٹھائے۔ اپنے اڑھائی سالہ دور حکومت میں تین میڈیکل کالج اور چھ یونیورسٹیاں بنائیں اور گورنمنٹ ہسپتالوں میں ڈاکٹر اور ادویات کی فراہمی کے ساتھ ساتھ انفراسٹرکچر کو بھی بہت حد تک بہتر بنایا۔ آخر میں انہوں نے تمام صحافی برادری کا شکریہ ادا کیا اس موقع پر نیشنل پارٹی تلہ گنگ کے نوجوان دوستوں نے انتہائی مستعدی کا مظاہرہ کیا پروگرام کے اختتام پر نیشنل پارٹی تلہ گنگ کے آرگنائزر حسنین ملک نے تمام مہمانوں کا شکریہ ادا کیا اور پارٹی کی مرکزی قیادت کو کارکنوں کو الوداع کیا ۔

تبصرے

شیئر کریں

کوئی تبصرہ نہیں

جواب چھوڑ دیں