بوچھال کلاں سیمٹ فیکٹری مالکان اور شہریوں کے درمیان ٹھن گئی۔۔۔

0
165

8

بوچھال کلاں (نامہ نگار ) بوچھال کلاں کے قریب لگنے والی سیمنٹ فیکٹری مالکان نے بلکسر کے عوام کی رائے لینے کے بعد میانی اور دیگر مواضات کے عوام کی بھی رائے لینا شروع کر دی تفصیل کے مطابق کافی عرصہ سے نجی سیمنٹ فیکٹری نے بوچھال کلاں آبادی کے نذدیک سیمنٹ پلانٹ لگانے کا فیصلہ کیا جسے عوام نے وہاں سیمنٹ پلان لگنے سے روکنے کے لئے عدالت سے رجوع کر رکھا ہے مگر فیکٹری مالکان بضد ہیں کہ وہ فیکٹری اسی جگہ پر ہی لگائیں گیجس کے لئے محکمہ ماحولیات نے بوچھال کلاں کے عوام سے رائے لینے کے بجائے ایک سیمنار بلکسر میں کیا اور دوسرا سیمنار میانی میں کر کے اپنا ہوم ورک مکمل کرنے کی کوشش کی بوچھال کلاں کے عوام کو تحفظات ہیں کہ فیکٹری آبادی کے نزدیک ہونے کی وجہ سے ہمارا ماحول تباہ ہو جائے گا یہاں چراہ گاہیں ختم ہو جائیں گی ہمارہ نسلوں کے لئے مکانات کی تعمیر کے لئے جگہ نہیں رہے گی اب جبکہ موٹر وئے بڑی گاڑیوں کے لئے بند ہے اور بڑی گاڑیاں خوشاب روڈ کو استعمال کرتی ہیں پورا روڈ تباہی کے دہانے پر پہنچ چکا ہے متعدد حادثات بھی رونما ہو چکے ہیں اب یہ روڈ مذید ٹریفک کا متحمل نہیں ہے فیکٹری لگنے کے بعد یہاں گاڑیوں کی تعداد میں اضافہ ہمارے لئے مسائل پیدا کر سکتا ہے جبکہ سیمنٹ فیکٹری کے جنرل مینجرانور طارق نے کہا کہ سیمنٹ فیکٹری پلانٹ سے ماحول خراب نہیں ہو گا ہم یہاں ہسپتال اور ایبولینس سروس شروع کریں گے عوام کے لئے واٹر سپلائی سکیم بھی بنائیں گیاور وعدہ کرتے ہیں کہ فیکٹری میں ملازمتیں بھی مقامی لوگوں کو ہی دی جائیں گی اس سیمنار سے ملک ارسلا خان مکھیال ، ملک عجائب بوچھال کلاں ملک صفدر حیات بربری ملک امداد کہوٹ سابق ناظم یو نین کونسل بوچھال کلاں ملک اشرف زکی ،نومی جھامرہ ،ملک نوید اکبر دھرکنہ کے علاوہ متعدد لوگوں نے اپنے تحفظات کا اظہار کیا

تبصرے

شیئر کریں

کوئی تبصرہ نہیں

جواب چھوڑ دیں