جبی شاہ دلاور کا جھولا کھلنے کیلئے معزز عدالت کے رحم و کرم پر۔۔۔

0
124

1

اسلام آباد( شہزاد احمد ملک) جبی شاہ دلاور کا جھولا عدالت کے رحم و کرم پر، تاحال جھولا بند، کئی مہینے گزر گئے اب تلہ گنگ کی معزز عدالت میں جھولا کے بند ہونے کا مقدمہ زیر سماعت ہے آمدہ تاریخ دیدی گئی ہے تفصیلات کے مطابق جبی شاہ دلاور کا جھولا مقامی نمائندے ممتاز ٹمن ایم این اے، ایم پی اے ملک ظہور انور، شہریار اعوان، ملک سلیم اقبال اور عوامی نمائندے نہ کھلوا سکے عوام نے تنگ آکر معزز عدالت کا دروازہ کھٹکھٹا دیا اور کئی ماہ سے بند جھولا دریائے سواں سے آمدورفت کا واحد ذریعہ تھا جو وہ بھی عوامی نمائندے حل نہ کر سکے اب کیس معزز عدالت میں زیر سماعت ہے اور اب معزز عدالت کے رحم و کرم پر ہے صد افسوس کہ ان لیڈروں کو ووٹ لینے کا تو پتہ ہے لیکن عوام کے مجبوریوں اور عوام کے بچوں کی مجبوریوں کا علم نہیں آخر کیوں جبی شاہ دلاور کی آدھی آبادی دریائے سواں کے پار ہے ڈھوک پھلی، دھنوالہ، اوچھڑی، چھوئی اور دیگر علاقے اٹک کے جنڈ، بھروالہ، ڈھوک حبیب، چکی میرا شریف اور دیگر کئی علاقے ہیں جبی شاہ دلاور کے عوام نے ساون کے مہینے میں بھی بڑی کوشش کی کہ ان کے بچے اور بچیاں کشتیوں کے ذریعے سکول جانے پر مجبور تھے انہوں نے مقامی نمائندوں کو بھی دہائی دی لیکن انہوں نے ایک کان میں ڈالی اور دوسرے کان سے نکال لی کیونکہ الیکشن نہیں تھے اگر الیکشن ہوتے تو شاید ان کو عوام کا یہ مسئلہ یاد آجاتاصد افسوس کہ بچے اور بچیاں تعلیم کے حصول کیلئے ملتان خورد، ٹمن، جبی شاہ دلاور کشتیوں کے ذریعے جان کو خطرے میں ڈال کر جاتے ہیں لیکن ان کو اتنا احساس نہیں مقامی نمائندوں نے اپنی طرف سے تو زور لگایا مگر ان کو اپنی لڑائیوں اور جھگڑوں سے فرصت نہیں اور فیس بک پر ہی اپنی پبلسٹی سے دل بہلاتے رہتے ہیں اور پنجہ آزمائی کرتے رہتے ہیں میری ان چند نام نہاد صحافیوں سے بھی ہمدردانہ گزارش ہے کہ آیا آپ کو بھی یہ جھولے یہ ایک جھولا نہیں تین جھولے ہیں کی خبریں عوام کی چیخ و پکار شائع نہ کر سکے یا کسی ایم این اے یا ایم پی اے کو اپروچ نہ کرا سکے اور عوام تنگ آکر اور مالک نے تنگ آکر معزز عدالت کا دروازہ کھٹکھٹانا پڑا آپ کو بھی چاہئے تھا کہ آپ بھی خبریں پبلش کرتے اور ان پر عملدرآمد کراتے ڈیلی تلہ گنگ نیوز نے ہمیشہ کوشش کی ہے تلہ گنگ ٹائم نے کوشش کی ہے کہ جھولے بحال ہوں یہ ایک جھولا نہیں شاہ محمد والی کا بھی جھولا ہے کوٹیڑہ میں لگا ہوا ہے جبکہ مرکھال کا جھولا بھی زیر تکمیل ہے عوام کا کوئی احساس نہیں خدارا عوام کے اس دیرینہ مسئلہ کو حل کرنے کیلئے سنجیدگی سے اقدامات اٹھائیں ورنہ ووٹ کی توقع نہ رکھنا۔

تبصرے

شیئر کریں

کوئی تبصرہ نہیں

جواب چھوڑ دیں