ہمارا مشن حلقہ این اے 61 کی ترقی۔۔۔

0
438
web1اسلام آباد(ارسلان احمد ملک) معزز قارئین اور میرے غیورعوام اور میرے حلقہ این اے 61 کے شہیدوں اور غازیوں کے زمین پر بسنے والوں میں آج آپ سے کچھ باتیں شےئر کر رہا ہوں گزشتہ دو ہفتے قبل میرے بھائی شہزاد احمد ملک نے ایک الیکشن باکس لگایا تھا کہ ڈیلی نیوز کو چلنا چاہئے یا بند ہو جانا چاہئے تو میرے تمام معزز قارئین نے اسی ایک بات پر لبیک کہا کہ ڈیلی تلہ گنگ نیوز کو جاری رہنا چاہئے وہ شہزاد احمد ملک نے کیوں لگایا تھا اس کی میں آج آپ کو تفصیلات بتا دیتا ہوں یعنی پنڈوڑہ بکس کھول دیتا ہوں میں آج اللہ کو گواہ بنا کر لکھ رہا ہوں کہ ہماری کسی سے کوئی ذاتی عداوت نہیں نہ دشمنی ہے صرف ایک شوق ہے ایک مشن ہے ایک مقصد ہے وہ آپ بخوبی جانتے ہیں کہ ہم نے حلقہ این اے 61 کے عوام سے وعدہ کر رکھا ہے کہ ہم یہاں وڈیرا شاہی بھی ختم کریں گے جاگیرداری نظام بھی ختم کرینگے اور افسر شاہی کا بھی خاتمہ ہو گا آج بھی میں اس بات پر قائم و دائم ہوں نہ کبھی قدم لڑکھڑائے ہیں نہ لڑکھڑائیں گے میرے معزز قارئین اور میرے غیور عوام جب بھی تلہ گنگ میں ، لاوہ میں واقعہ ہوا سب سے پہلے ڈیلی نیوز نے چھاپہ عوام تک پہنچایا ایوان بالا تک پہنچایا ہمیں نام کمانے کا نہ تو شوق ہے اور نہ ہی ہمارا سیاست سے کوئی دلچسپی ہے کالج کے سٹوڈنٹس ہیں اور دل میں جو خواہش ہے وہ انشاء اللہ پوری کرکے ہی دم لیں گے۔ ہمیں ایف آئی آے میں گھسیٹا گیااور ہمیں عدالتوں میں گھسیٹا گیا ہر بات آن دی ریکارڈ ہے میں کوئی ایسی بات آپ سے نہیں کروں گا جو آف دی ریکارڈ ہو ہم تو سٹوڈنٹس ہیں کوئی اپنی ذات کیلئے نہیں لکھ رہے اور نہ ہی لکھیں گے نہ کوئی پھلچڑیاں بنا رہے تھے نہ کوئی سٹائل کے فوٹو بناتے ہیں ہم تو صرف عوام کی بھلائی جو میری مائیں بہنیں بزرگ اور آمدہ جوان جنریشن جس میں میں بھی شامل ہوں حکمران ہوں یا اپوزیشن لیڈر ان کو اپنے مسائل سے آگاہ کر رہے تھے کہ چند شرپسند عناصر نے ہمیں ایف آئی اے میں گھسیٹا لیکن الحمداللہ سانچ کو آنچ نہیں ہم تو وہ ہیں جنہوں نے ایف آئی اے میں بھی جا کر اپناوہی موقف اختیار کیا جو حقیقت پر مبنی تھا اور معزز عدالت میں بھی وہی اختیار کیا جو حقیقت پر مبنی تھا تو مجھے بڑی حیرت اور افسوس ہواکہ یہ چند شرپسندوں کو ہماری خبروں سے چڑ کیوں ہے اور یہ کیوں ملک دشمنی عوام دشمنی کر رہے ہیں اور اگر ہمیں حلقہ این اے 61 کیلئے سولی پر بھی چڑھنا پڑے تو انشاء اللہ سولی پر چڑھ جائیں گے لیکن کبھی ہار نہیں مانیں گے کیونکہ ہار ہار ہوتی ہے جیت کرسرخرو ہوئے اور آئندہ بھی عوام کے مسائل لکھتے رہیں گے ہم لکھتے ہی نہیں بلکہ متعلقہ اداروں تک بھی پہنچاتے ہیں ہم پر دباؤ بھی ڈالے گئے ہمیں دھمکیوں سے بھی نوازا گیا لیکن الحمداللہ آپ کی دعاؤں کی طاقت ہمارے ساتھ ہے ہمارا کوئی بال بیکا نہیں کر سکتاشرپسندوں سن لو یہ گھٹیا سازشیں ہمارا کچھ نہیں بگاڑ سکتیں۔ بھاگنے والا ہوتا تو 2010ء سے بھاگ جاتا مجھے یا میرے بھائی کو خیبر سے کراچی تک لوگ جانتے ہیں۔

تبصرے

شیئر کریں

کوئی تبصرہ نہیں

جواب چھوڑ دیں